”کسی کو باہر نہ جانے دو “کشمالہ طارق کی ویڈیو بھی لیک ہو گئی

اسلام آباد(ویب ڈیسک ) معروف اینکر پرسن مطیع اللہ جان اور رکن پارلیمنٹ کشمالہ طارق کے درمیان لڑائی کی ویڈ یو بھی منظر عام پر آگئی، مطیع اللہ جان نے خاتون سیاستدان سے چبھتے ہوئے سوالات کیے تو وہ طیش میں آگئیں اور اپنے سٹاف کو حکم دے دیا کہ کمرے سے کوئی باہر نہ جائے ،میڈ یا نے تماشا بنا یا ہوا ہے جس مرضی کی پگڑی اچھال دیتے ہیں ۔پھر وہاں کشمالہ طارق کے سٹاف اور مطیع اللہ جان کی ٹیم کے درمیان لڑائی شروع ہو گئی
تفصیل کے مطابق معر وف اینکر پرسن مطیع اللہ جان نے رکن پارلیمنٹ کشمالہ طارق سے انٹرویو کے آغاز میں ان کا تعارف کرایا اور پھر خواتین کے عالمی دن کے حوالے سے سوالات کیے۔ کشمالہ طارق نے اپنے ماضی کی خواتین کے لیے کی گئی کاوشوں کا حوالہ دیا۔ اس بیچ مطیع اللہ جان نے سوال کیا کہ آپ کے نزدیک ”ہراسمنٹ” کی کیا تعریف ہے تاکہ ناظرین کو سمجھ آ سکے۔ کشمالہ طارق نے اس کا کچھ نہ کچھ جواب دیا۔ اس کے بعد کچھ دیر تک خواتین کے حقوق پر بات ہوتی رہی۔
مطیع اللہ جان نے دوران گفتگو سوال کیا کہ ایک آمر کے دور میں آپ خصوصی نشست پر پارلیمنٹ کا حصہ بنیں ، اس وقت جو درخواست آپ نے اپنی پارٹی یعنی قاف لیگ کو دی تھی اس میں اپنی کیا کوالیفکیشن لکھی تھی جس کی بنیاد پر آپ خود کو خصوصی نشست کی اہل سمجھتی تھیں؟ اس سوال کا جواب آئیں بائیں شائیں تھا۔ اسی ذیل میں کشمالہ نے مشرف عہد کی تعریف کی کہ اس دور میں خواتین کو پارلیمنٹ میں زیادہ نمائندگی ملی اور کچھ قوانین کا حوالہ بھی دیا ، جن کے بننے کا کریڈٹ کشمالہ اپنے نام کرتی ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں