چیف جسٹس کا پی آئی سی کا دورہ ، ایمرجنسی میں گئے تو ایسے لوگوں کو دیکھ لیا کہ فوری طور پر انتظامیہ کو طلب کرلیا

لاہور (ویب ڈیسک) چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کے پنجاب انسٹیٹیوٹ آف کارڈیالوجی (پی آئی سی) لاہور کے دورے کے دوران مریضوں نے شکایات کے انبار لگادیے، ایمرجنسی میں مریضوں کو بیٹھا دیکھ کر چیف جسٹس نے انتظامیہ کو طلب کرلیا۔
نجی میڈیکل کالجز کی فیسوں سے متعلق از خود نوٹس کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے ہنگامی طور پر سروسز ہسپتال اور پی آئی سی کا دورہ کیا۔ پی آئی سی کے دورے کے دوران چیف جسٹس جہاں سے بھی گزرے مریضوں نے شکایات کے انبار لگادیے۔ چیف جسٹس ایمرجنسی میں گئے تو وہاں وہیل چیئر پر بیٹھے ہوئے مریضوں سے موجودگی کی وجہ پوچھی، جس پر انہوں نے بتایا کہ وہ رات ساڑھے 12 بجے سے ایمرجنسی میں آئے ہیں اور کل رات سے کرسیوں پر ہی بیٹھے ہوئے ہیں اور انہیں کوئی بیڈ نہیں دیا گیا۔
مریضوں کی شکایت پر چیف جسٹس نے انتظامیہ سے استفسار کیا تو ڈاکٹرز نے چیف جسٹس کو بتایا کہ ہسپتالوں کی تعداد کم ہونے کے باعث مریضوں کا رش بڑھ جاتا ہے ،ہستپالوں کی تعداد بڑھانا حکومت کاکام ہے۔ ایمرجنسی لوگوں کے عطیات سے بنی ہے حکومت نے کوئی پیسے نہیں دیے جس کی وجہ سے سہولیات کی کمی ہے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ جن چیزوں کی ضرورت ہے وہ ہمیں بتائی جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں