کاٹن مارکیٹ میں کاروبار تین ہفتے سے معطل، ٹیکسٹائل انڈسٹری کو شدید نقصان

کراچی: (سٹی نیوز) کاٹن مارکیٹ میں گزشتہ ہفتے کے دوران بھی کورونا وائرس کی وجہ سے لاک ڈاؤن کے سبب کاروبار نہیں ہو سکا۔

کاٹن ایکسچینج میں کاروبار معطل ہوئے تقریباً تین ہفتے ہو گئے ہیں گوکہ کاٹن ایسوسی ایشن کا دفتر روزانہ کھلا رہتا ہے لیکن جنرز اور ٹیکسٹائل ملز کاروبار میں فی الحال دلچسپی نہیں لے رہے۔

صرف کاٹن ایکسچینج میں ہی کیا پورے ملک میں کاروبار معطل ہے تاہم بین الاقوامی اور بینکوں کی ضرورت کے سبب کراچی کاٹن ایسوسی ایشن کی کمیٹی نے سپاٹ ریٹ فی من 8800 روپے کے بھاؤ پر مستحکم رکھا ہوا ہے۔

صوبہ سندھ اور پنجاب میں روئی کا بھاؤ فی من 7000 تا 8800 روپے ہے جبکہ کاروبار کی کہیں سے رپورٹ موصول نہیں ہو رہی۔ لاک ڈاؤن کے سبب دیگر کاروبار کی طرح ٹیکسٹائل مصنوعات کا کاروبار بھی بری طرح متاثر ہو رہا ہے۔

بیرون ممالک خصوصی طور پر یورپ اور امریکہ کے درآمدکنندگان کئے ہوئے درآمدی معاہدوں سے منحرف ہو رہے ہیں کئی درآمد کنندگان سودے مؤخر بھی کررہے ہیں جس کے باعث ٹیکسٹائل انڈسٹری کو ناقابل برداشت نقصان اٹھانا پڑ رہا ہے۔

لاک ڈاؤن ہونے کی وجہ سے مقامی طور پر بھی نقصان ہو رہا ہے۔ خصوصی طور پر رمضان کے مبارک مہینے سے قبل خصوصی طور پر ٹیکسٹائل مصنوعات کا سیزن ہوتا ہے لیکن لاک ڈاؤن کی وجہ سے دکاندار،آؤٹ لیٹس اور مال بند پڑے ہوئے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں