جلاس میں نواز شریف نے شہباز شریف کو وزیراعظم بنانے کی تجویز پیش کی

اسلام آباد( سٹی نیوز) مسلم لیگ ن نے مشاورتی اجلاس میں سپریم کورٹ کا فیصلہ یکسر مسترد کر دیا، وفاقی کابینہ کے سابق اراکین عدالت کے فیصلے پر خو ب بر سے ، نواز شریف کو کھل کر سامنے آنے اور سازشی اداروں اور عناصر کا نام لینے کا بھی مشورہ دے ڈالا جبکہ اجلاس میں نواز شریف نے شہباز شریف کو وزیراعظم بنانے کی تجویز پیش کی، جس کی توثیق مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں نے بھی کردی، عوام میں جانے کیلئے جلسے جلوسوں کا نیا شیڈول تیار کرنے کا حکم بھی دیدیا ،اجلاس میں گفتگو کرتے ہوئے کہا نواز شریف کا کہنا تھا مسلم لیگ ن عوام کے دلوں میں بس چکی ہے ،ہمیں پیچھے نہیں آگے بڑھنا ہے ،کاش کوئی وزیراعظم پانچ سال پورے کرے۔جمہوریت کو تسلسل کیساتھ دیکھنا چاہتاہوں۔ مسلم لیگ ن نے ترقیاتی کاموں کی تاریخ رقم کی ہے، ذرائع کا کہنا ہے ن لیگ اب ججز اور جرنیلوں کے احتساب کا بھی مطا لبہ کرنے جا رہی ہے جبکہ ن لیگ اہم عہدوں پر اہم تبدیلیاں بھی کرے گی، ذرائع کا کہنا ہے نئے وزیر اعظم کیساتھ ساتھ نیا صدر بھی آئے گا اور اس کیلئے حیرت انگیز طور پر سابق وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثارعلی خان کا نام لیا جا رہا ہے موجودہ صدر ممنون حسین خود ہی خرابی صحت کا بہا نہ بنا کر عہدے سے مستعفی ہو جائیں گے جبکہ عبوری وزیر اعظم کیلئے سپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق ، ڈپٹی سپیکر مرتضی جاوید عباسی اور سابق وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال اور سابق وزیر پیٹرولیم شاہد خاقان عباسی کا نام لیا جا رہا ہے اس دوران نواز شریف کی خالی نشست پر وزیر اعلی پنجاب شہباز شریف ضمنی انتخاب لڑینگے اور این اے120 سے منتخب ہو کرنئے وزیر اعظم بنیں گے ،پنجاب میں حمز ہ شہباز کو لایا جائے گا اور حمزہ شہباز اپنے والد کی صوبائی اسمبلی کی نشست پر ضمنی انتخاب لڑیں گے جبکہ انکی ایم این اے کی نشست پر کسی اور لیگی عہدیدار کو آگے لایا جائے گا ،پنجاب میں عبوری وزیر اعلیٰ کے لئے رانا ثناء اللہ ، مجتبیٰ شجاع الرحمن اور ندیم کامران کے نام لئے جا رہے ہیں،ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ اب ن لیگ کھلم کھلا اعلی عدلیہ اور بعض اداروں کو اپنے نشانے پر رکھے گی کیونکہ ن لیگ نے مشاورتی اجلاس میں سپریم کورٹ کا فیصلہ یکسر مسترد کر دیا اور اسے انصاف کا قتل قرار دیا ہے، بعض رہنماؤ ں نے تو یہاں تک کہا کہ آرٹیکل باسٹھ تریسٹھ کی آڑ میں اٹھاون ٹو بی کا عدالتی استعمال ہوا ہے ، سابق وزیر اعظم نواز شریف نے آج ہفتہ کو مسلم لیگ ن کی پارلیمانی پارٹی کا اجلاس بھی بلایا ہے جس میں وہ پارٹی صدر کے انتخاب سمیت نئے عبوری وزیر اعظم کیلئے ناموں کی منظوری حاصل کریں گے اور ساتھ ہی اپنی آئندہ کی حکمت عملی بارے بھی بتائیں گے ،ذرائع نے مزید بتایا کہ ن لیگ کا جو بھی وزیر اعظم آئے گا کابینہ میں زیادہ تر پرانے چہرے ہی شامل ہونگے البتہ وزیر داخلہ اور وزیر خزانہ کے عہدوں پر نئی شخصیات لائی جائیں گی۔پاناما کیس کے فیصلے کے بعد سپریم کورٹ کی جانب سے نواز شریف کو نااہل قرار دینے کے بعد مشاورتی اجلاس میں نواز شریف نے شہباز شریف کو وزیراعظم بنانے کی تجویز پیش کی، جس کی توثیق مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں نے بھی کردی۔اجلاس میں وفاقی وزرا ء سمیت مسلم لیگ ن کے رہنما، گورنر سندھ محمد زبیر دیگر قانونی ماہرین بھی شریک تھے۔ جبکہ اتحادیوں نے نواز شریف کے ہر فیصلے کی تائید کا عندیہ دیدیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے نوازشریف نے اجلاس میں گفتگو کرتے ہوئے کہا مسلم لیگ ن عوام کے دلوں میں بس چکی ہے ،ہمیں پیچھے نہیں آگے بڑھنا ہے ،کاش کوئی وزیراعظم پانچ سال پورے کرے۔ پاناما فیصلے کے باعث سٹاک مارکیٹ کو شدید نقصان پہنچا ہے ،سٹاک مارکیٹ آج بہت نیچے آئی ہے ،جمہوریت کو تسلسل کیساتھ دیکھنا چاہتاہوں۔ آج دہشت گردی 2013کے مقابلے میں بہت کم ہے ،ماضی میں اتنے ترقیاتی کام نہیں ہوئے جتنے ہم نے کیے ہیں ،مسلم لیگ ن نے ترقیاتی کاموں کی تاریخ رقم کی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں