وہ جہاز جس نے 2018 میں ٹیک آف کیا لیکن لینڈنگ 2017 میں جا کر کی

آکلینڈ(ویب ڈیسک) دنیا بھر میں اوقات کے اختلاف کے بارے میں ہم سب جانتے ہیں لیکن اسی اختلاف کے نتیجے میں اس وقت دلچسپ صورتحال پیداہوگئی جبکہ ایک ہی پرواز کے مسافروں نے دو دفعہ مختلف مقامات پر نئے سال کا جشن منایا ،نیوزی لینڈ کے شہرآکلینڈ سے اڑان بھرنے والے ایک طیارے نے 2018ءمیں اڑان بھری لیکن امریکی ریاست پہنچاتووہاں ابھی 2017ءہی تھا اور مسافروں کو ایک مرتبہ پھر نئے سال کو خوش آمد ید کہنے کا موقع مل گیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ہوائی کی فضائی کمپنی ”ہوائین ایئرلائنز‘کی پرواز ایچ اے 446کو نیوزی لینڈ کے شہر آکلینڈ سے اکتیس دسمبر کی رات 11بج کر 55منٹ پر اڑان بھرناتھی لیکن 10منٹ تاخیر ہونے کی وجہ سے یکم جنوری2018ءکو بارہ بج کر پانچ منٹ پر اڑان بھری ، اس طیارے کی منزل امریکی ریاست ہوائی کا دارلحکومت ہونولوو تھی اور جب وہاں لینڈنگ کی تو مقامی وقت کے مطابق اکتیس دسمبر2017ءکو صبح 10.16منٹ تھے۔یادرہے کہ دونوں مقامات کے دوران وقت کا23گھنٹے کا فرق ہے

یہ کوئی اکلوتاطیارہ نہیں تھا جس نے ایک سال قبل یعنی 2018میں اڑان بھر کر 2017ءمیں لینڈنگ کی بلکہ اسی طرح کی کئی اور پروازیں بھی تھیں، ایئرنیوزی لینڈ کی پپیتو جانیوالی پروازاین زیڈ40نے یکم جنوری کی صبح 10:25منٹ پر اڑان بھری اور 31دسمبر کی شام 4:25منٹ پر لینڈنگ میں کامیاب ہوئی ۔ ایسی اندازاً 6پروازیں تھیں جنہوں نے امریکہ اور کینیڈا میں2017ءمیں لینڈنگ کی جو اپنی منزل سے 2018ءمیں اڑان بھرچکی تھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں