نواز شریف بھارت کے ساتھ اچھے تعلقات کی خواہش رکھتے ہیں جبکہ چوہدری نثار بھارت کے بارے میں سخت جذبات رکھتے ہیں جس کی وجہ سے انہوں نے وزارت خارجہ کا قلمدان لینے سے انکار کردیا

اسلام آباد (سٹی نیوز)سینئر صحافی اعزاز سید نے دعویٰ کیا ہے کہ سابق وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے 2013 میں نواز شریف کی بھارت پر پالیسی کے باعث وزارت خارجہ کا قلمدان سونپنے سے انکار کردیا تھا۔
اعزاز سید کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن میں وفاقی کابینہ کی تشکیل کے حوالے سے مشاورت کا عمل جاری ہے اور امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ 99 فیصد وزارتیں پرانے وزرا کو ہی دی جائیں گی تاہم چوہدری نثار اپنی وزارت کے بارے میں فیصلہ خود ہی کریں گے۔ چوہدری نثار نے قیادت کو اشارہ دے دیا ہے کہ وہ وزیر داخلہ نہیں بنیں گے اور ان کا وزیر خارجہ بننے کا بھی کوئی امکان نہیں ہے۔
انہوں نے کہا میڈیا میں یہ خبریں گردش کر رہی ہیں کہ چوہدری نثار علی خان وزارت خارجہ لینا چاہتے تھے لیکن انہیں نواز شریف نے وزارت داخلہ کا قلمدان سونپ دیا تھا۔ان خبروں میں کوئی صداقت نہیں ہے کیونکہ 2013 میں تشکیل پانے والی کابینہ سے پہلے نواز شریف اپنے دیرینہ ساتھی چوہدری نثار کو وزارت خارجہ کا قلمدان سونپنا چاہتے تھے لیکن انہوں نے یہ کہہ کر وزارت لینے سے انکار کردیا تھا کہ ان کے بھارت کے معاملے پر خیالات نواز شریف سے مطابقت نہیں رکھتے۔ نواز شریف بھارت کے ساتھ اچھے تعلقات کی خواہش رکھتے ہیں جبکہ چوہدری نثار بھارت کے بارے میں سخت جذبات رکھتے ہیں جس کی وجہ سے انہوں نے وزارت خارجہ کا قلمدان لینے سے انکار کردیا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں