”اگر آئی پی ایل میں پاکستانی کرکٹر شامل ہوتے تو شاداب خان “معروف ویب سائٹ کرک انفو کے سوال پر بھارتیوں نے ایسا اعتراف کرلیاکہ پاکستانی بھی شاداب خان پر فخر محسوس کریں گے

لاہور(ویب ڈیسک ) بھارتی ڈومیسٹک ٹوینٹی 20 لیگ آئی پی ایل میں اگر پاکستانی کرکٹرز شامل ہوتے تو سب سے زیادہ اہمیت اور قیمت لیگ اسپنر شاداب خان کی ہوتی،بھارتی فرنچائزز نے حیران کن اعتراف کردیا ۔
بھارت اور پاکستان کے درمیان سیاسی کشیدگی نے کھیلوں کو بھی اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے،کشیدہ سیاسی حالات کی وجہ سے پاکستانی کرکٹرز 2008 کے بعد سے آئی پی ایل کا حصہ نہ بن سکے۔اس حوالے سے ویب سائٹ کرک انفو نے کام کرتے ہوئے فرنچائزز سے سوالات کرتے ہوئے نتائج مرتب کئے ہیں کہ اگر پاکستانی کھلاڑیوں کو ایونٹ کا حصہ بنانے میں کوئی رکاوٹ نہ ہوتی تو کس کو زیادہ توجہ ملتی؟۔
دلچسپ امر یہ ہے کہ سب سے زیادہ مانگ شاداب خان کی سامنے آئی۔آئی پی ایل فرنچائز کی نظر میں شاداب خان وہ کھلاڑی ہیں جو تنہا میچ جتوانے کی صلاحیت رکھتے ہیں، شاداب کی گوگلی اور تیز رفتار گیند بلے بازوں کو پریشان کیے رکھتی ہے جب کہ وہ بہترین فیلڈر اور مکمل بلے باز بھی ہیں۔ پریشان کن گگلی بولنگ، پر اعتماد بیٹنگ اور مستعد فیلڈر ہونے کی وجہ سے ان کی قیمت 5 سے 6 کروڑ بھارتی روپے لگائی گئی۔فاسٹ بولر حسن علی دوسرے کھلاڑی ہیں جو آئی پی ایل فرنچائزز کی نظروں میں ہیں اور ان کی حالیہ کارکردگی کے باعث ان کی قیمت 3 سے 5 کروڑ بھارتی روپے لگائی گئی ہے۔

کم بیک کے بعد ماضی جیسی تہلکہ خیز کارکردگی نہ دکھاپانے والے محمد عامر میں بھی آئی پی ایل فرنچائزز کی دلچسپی سامنے آئی،سوئنگ اور اسپیڈ کی صلاحیتوں کو پیش نظر رکھتے ہوئے انکی قیمت 3 سے 6 کروڑ بھارتی روپے لگائی گئی ہے۔تجربہ کار شعیب ملک بھی بھارتی فرنچائزز کی توجہ کا مرکز بنتے، بحرانی صورتحال میں پر اعتماد بیٹنگ اور اسپن بولنگ کی اضافی صلاحیتوں کی وجہ سے فرنچائز مالکان نے ان کی قیمت 2 سے 4 کروڑ بھارتی روپے لگائی ہے۔فہیم اشرف کو آئی پی ایل کی ٹیموں میں شمولیت کا مستحق سمجھاگیا ہے، فرنچائزز بولنگ کے ساتھ جارحانہ بیٹنگ کی صلاحیتوں کو پیش نظر رکھتے ہوئے ایک سے 2 کروڑ بھارتی روپے لگائی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں