شہر کے مختلف علاقوں سے ایک ہی نوجوان لڑکی کے جسمانی اعضاء ملنے لگے، پورے شہر میں لاش کے ٹکڑے کس نے بکھیرے؟ پولیس نے تفتیش کی تو ایسا انکشاف کہ جان کر ہی انسان کے رونگٹے کھڑے ہوجائیں

اوساکا(ویب ڈیسک) جاپان جیسے پرامن ملک کے شہر اوساکا میں اس وقت شدید خوف وہراس پھیل گیا جب شہر کے مختلف مقامات سے انسانی اعضاء ملنے لگے۔ ان اعضاء کے معائنے سے معلوم ہو اکہ یہ ایک ہی انسان کے تھے، لیکن شہر کے مختلف حصوں سے مل رہے تھے۔ یہ خوفناک صورتحال تھی لیکن جب مزید انکشافات سامنے آئے تو پتا چلا کہ شہر میں کس قدر بھیانک جرم ہو چکا تھا۔
ویب سائٹ ’ورلڈ وائڈ وئیرڈ نیوز‘ کے مطابق یہ اعضاء 27 سالہ لڑکی ساکی کونڈو کے تھے جس کے والدین نے چند دن قبل اس کی گمشدگی کی رپورٹ درج کروائی تھی۔ پولیس نے سی سی ٹی وی ویڈیو میں اسے ایک غیر ملکی مرد کے ساتھ ایک فلیٹ میں جاتے دیکھا تھا لیکن پھر اسے باہر آتے نہیں دیکھا گیا۔ جب اس شخص کی تلاش کی گئی پتا چلا کہ وہ یاوگینی ویسلیف نامی امریکی شہری تھا جو سیاحت کی غرض سے جاپان آیا ہوا تھا۔ پولیس نے جب اس کے فلیٹ پر چھاپہ مارا تو یہ دیکھ کر اہلکاروں کے رونگٹے کھڑے ہو گئے کہ یاوگینی نے ایک بریف کیس میں لڑکی کا کٹا ہوا سر چھپا رکھا تھا۔
اس سفاک ملزم سے تفتیش کی گئی تو اس نے اپنے لرزہ خیز جرم کا اعتراف کر لیا اور ساری تفصیلات بتا دیں۔ اس کا کہنا تھا کہ لڑکی کو دوستی کے بہانے اپنے فلیٹ پر بلایا تھا لیکن بعد ازاں اسے قتل کر کے جسم کے اعضاء کاٹ کر علیحدہ کر دئیے تھے۔ اس نے مقتولہ کا دھڑ، دونوں ٹانگیں اور دونوں بازو الگ کئے اور پھر انہیں الگ الگ مقامات پر پھینکا تھا۔ یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ اس نے مقتولہ کا سر کیوں اپنے بریف کیس میں رکھا ہوا تھا۔ یہ سفاک شخص پولیس کی حراست میں ہے اور اس کے خلاف قانونی کاروائی جاری

اپنا تبصرہ بھیجیں