روٹی، کپڑا اور مکان کے نعرے کی آڑ میں زرداری نے منی لانڈرنگ کی، فرخ حبیب

اسلام آباد: (سٹی نیوز) وزیر مملکت اطلاعات فرخ حبیب نے کہا ہے کہ روٹی، کپڑا اور مکان نعرے کی آڑ میں زرداری نے ملکی دولت لوٹ کر منی لانڈرنگ کی، جعلی اکاؤنٹس اور سوئٹزرلینڈ میں سرے محل بنائے۔

ان کا کہنا تھا کہ صوبہ سندھ میں تیسری مرتبہ پیپلز پارٹی کی حکومت ہے لیکن انہوں نے سوائے غربت، کرپشن اور لوٹ مار کے اور کون سا کارنامہ سر انجام دیا؟ سندھ میں غربت کے باعث وفاقی حکومت کی جانب سے احساس ایمرجنسی کیش کے سب سے زیادہ 57 ارب 13 کروڑ 39 لاکھ 96 ہزار سندھ میں تقسیم کیے گئے جو کہ مجموعی فنڈز کا 35 فیصد ہے۔

فرخ حبیب نے بلاول بھٹو زرداری کے بیان پر اپنے ردعمل میں کہا کہ وہ بتائیں سندھ کی عوام کو مفت علاج کے لیے ہیلتھ کارڈ کیوں نہیں دے رہے؟ پرچی چئیرمین سچ بتائیں کیا گندم خریداری کی سپورٹ پرائس 1400 سے بڑھا کر 2000 روپے فی من کرنے کا اثر آٹا کی قیمتوں پر نہیں آئے گا؟

انہوں کہا کہ 2008ء سے 2013ء تک پیپلز پارٹی کی حکومت میں فصلوں کی گروتھ اوسطاً 1.25 جبکہ آبادی کی گروتھ 2 فیصد تھی، آپ کی وجہ سے ملک میں فوڈ سکیورٹی کے مسائل پیدا ہوئے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان کی قیادت میں حکومت غذائی تحفظ کے شعبے میں خود کفالت کے لئے کام کر رہی ہے۔ پرچی چیئرمین مگرمچھ کے آنسو نہ بہائیں بلکہ سندھ میں گراں فروشوں اور ذخیرہ اندوز مافیا کے خلاف ایکشن لیں، اس وقت بھی سب سے زیادہ مہنگا 20 کلو آٹا کا تھیلا کراچی میں فروخت ہورہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ عمران خان نے غریب، بے سہارا اور مستحقین کو سہارا دیا اور چھت بنا کر دے رہے ہیں، کم آمدن گھروں کی تعمیر کے لئے 70 ارب کی درخواستیں موصول ہو چکی ہیں۔ بلاول عوامی امنگوں کے عین مطابق ایسا کوئی منصوبہ یا پروگرام ہے تو سامنے لائیں۔

انہوں نے کہا کہ جس صوبے کے چوہے 14 ارب روپے کی گندم کھا جائیں، عوام خود اندازہ لگا لیں کہ وہاں کے حکمراں کتنے کرپٹ ہوں گے۔ اٹھارویں ترمیم کے بعد زراعت تمام صوبوں کی طرح سندھ حکومت کی ذمہ داری ہے، کپاس کی پیداوار بڑھانے کی جائے کم کیوں ہوگئی ؟ زرداری کے فرنٹ گروپ اومنی گروپ نے 11شوگر ملز لگا لی جس کیوجہ سے سندھ میں کاٹن ایریا پرگنے کی کاشت شروع ہوگئی۔

انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کی فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن رپورٹ کے مطابق دنیا میں کھانے پینے کی اشیاء کی قیمتوں میں 40 فیصد، خوردنی آئل میں 124 فیصد اضافہ ہوا ہے ، پیپلز پارٹی کے دور میں ایک سال میں سب زیادہ مہنگائی 25فیصدپر تھی۔ انہوں نے کہا کہ پٹرول کی قیمتیں 34 ڈالر سے 70 ڈالر فی بیرل پہنچ گئی لیکن وزیراعظم نے عالمی سطح اضافہ کا بوجھ قیمتیں بڑھا کر پاکستانی عوام پر نہیں ڈالا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں