بھارتی مصنف جاوید اخترنے ملک میں لاﺅڈ سپیکر پر پابندی لگانے کا مطالبہ کردیا ہے

نئی دہلی (ویب ڈیسک) بھارت میں انتہا پسندی کی وجہ سے مسلمانوں کا جینا دوبھر ہے ، جہاں عام افراد انتہا پسندانہ نظریات رکھتے ہیں ، وہیں پڑھے لکھے اور سنجیدہ افراد کے دلوں میں بھی مسلمانوں کے خلاف نفرت ہے، بھارتی فلم انڈسٹری کی کئی شخصیات مسلمانوں کے خلاف کئی بار متنازعہ بیانات دیتی رہی ہیں ، گذشتہ سال سونو نگم نے مساجد میں لاﺅڈ سپیکر پر پابندی کا مطالبہ کیا تھا جبکہ اب معروف مصنف جاوید اختر نے بھی سونونگم کے مطالبے کی حمایت کردی ہے۔
سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ”ٹوئٹر“ پر ٹوئٹ کرتے ہوئے معروف بھارتی مصنف نے سونو نگم کے اذان پر پابندی لگانے کی حمایت کردی ہے ، جاوید اختر نے اپنے ٹویٹ میں کہا ہے کہ ”سونو نگم نے مسجد پر لاؤڈاسپیکر نصب کیے جانے پر جو بیان دیا ،اس سے میں اتفاق کرتا ہوں،مسجد ہی نہیں بلکہ رہائشی علاقوں میں واقع دیگر مذہبی مقامات پر لاؤڈاسپیکر نصب نہیں کیے جانے چاہئے اور ان کی اجازت نہیں دی جانا چاہئے “۔

اپنا تبصرہ بھیجیں