حکومت مخالف تحریک، اپوزیشن چار نکات پر متفق ہو گئی

اپوزیشن کے ان نکات میں حکومت کے خاتمے، وزیراعظم استعفے، ملک میں نئے انتخابات اور انتخابی عمل میں کسی بھی سطح پر فوج کے عمل دخل نہ ہونے پر اتفاق کیا گیا ہے۔
اپوزیشن کی رہبر کمیٹی کے اجلاس میں پیپلز پارٹی اور ن لیگ سمیت دیگر جماعتوں کی جانب سے آزادی مارچ اور دھرنے میں شرکت کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ نہیں ہو سکا ہے۔
یہ اجلاس کنوینئر اکرم درانی کے زیر صدارت ہوا جس میں اپوزیشن کے سرکردہ رہنماؤں نے شرکت کی۔ اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو میں اکرم درانی نے کہا کہ فیصلہ ہو چکا، اب اس حکومت کو مزید وقت نہیں دیا جا سکتا۔ مولانا فضل الرحمان کو سیاست کے لیے مذہبی کارڈ کی ضرورت نہیں ہے۔
ن لیگ اور پیپلز پارٹی کے رہنماؤں نے کہا کہ اس حکومت سے نجات کے لیے اپوزیشن احتجاجی تحریک پر متفق ہے۔ قوم حکمرانوں کے دھوکے میں نہیں آئے گی۔
اپوزیشن رہنماؤں کا کہنا تھا کہ پرامن احتجاج اپوزیشن کا حق ہے۔ خود دھرنا دینے والے وزیراعظم کو اب کسی مارچ پر اعتراض نہیں ہونا چاہیے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں