سائنسدانوں نے دنیا کو چھٹی تباہی کی خوفناک خبر سنا دی

نیویارک(ویب ڈیسک) ہماری زمین قبل ازیں پانچ بار بڑی تباہی سے دوچار ہو چکی ہے۔ ان تباہیوں میں جانوروں کی کئی نسلیں صفحہ ہستی سے مٹ گئیں جن میں ڈائنوسارز و دیگر شامل ہیں۔اب سائنسدانوں نے دنیا کو چھٹی تباہی کی خوفناک خبر سنا دی ہے۔ سائنسدانوں نے متنبہ کیا ہے کہ ’’گزشتہ کچھ عشروں سے جنگلی حیات کی ’حیاتیاتی فناء‘ کا عمل شروع ہو چکا ہے۔ یہ ہماری زمین کی تاریخ میں حیاتیاتی فناء کا چھٹا دور ہے جو توقع سے زیادہ شدت کے ساتھ جاری ہے۔‘‘
امریکہ کی سٹینفرڈ یونیورسٹی سمیت دنیا بھر کی کئی یونیورسٹیوں کے سائنسدانوں کی مشترکہ ٹیم نے اس تحقیق میں دنیا بھر میں پائی جانے والی جانوروں کی لاکھوں نسلوں کی تعداد کے ڈیٹا کا تجزیہ کیا اور نتائج میں بتایا کہ ’’نایاب نسلوں کے جانوروں کے ساتھ ساتھ عام پائے جانے والے جانوروں کی تعداد میں بھی تیزی کے ساتھ کمی واقع ہو رہی ہے اور اب تک مختلف نسلوں کے اربوں جانور کھو چکے ہیں۔جانوروں کے اس فناء کی ذمہ دار بڑھتی ہوئی انسانی آبادی اور اس کی بڑھتی ضروریات ہیں۔ جانوروں کی فناء کا تیز ہو چکا یہ عمل انسانی بقاء کے لیے بھی انتہائی خطرناک ثابت ہو گا اور اس ہولناک صورتحال پر قابوپانے کے لیے ہمارے پاس بہت کم وقت ہے۔‘‘
واضح رہے کہ سائنسدانوں کے مطابق زمین پر آخری تباہی ساڑھے 6کروڑ سال قبل آئی تھی۔ تب میکسیکو کے مقام پر ایک بڑا شہاب ثاقب زمین سے ٹکرایا تھا اور آج کے انڈیا و دیگر خطوں میں بڑے پیمانے پر آتش فشاں پھٹے تھے۔اس تباہی میں ڈائنوسارز و دیگر کئی دیوقامت جانوروں کی کئی نسلیں ختم ہو گئی تھیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں