ایک عام آدمی کی شکایت پر اماراتی ولی عہد کو ایک کروڑ ڈالر (تقریباً1ارب روپے)جرمانہ کر دیا گیا

دبئی(ویب ڈیسک) ایک عام آدمی کی شکایت پر اماراتی ولی عہد کو ایک کروڑ ڈالر (تقریباً1ارب روپے)جرمانہ کر دیا گیا، جبکہ یہ جرمانہ ایک ایسی شکایت پر کیا گیا کہ ہمارے ہاں یہ شکایت کی جاتی تو خاطر میں ہی نہ لائی جاتی۔ حسن نامی اس شخص نے امریکی شہر لاس اینجلس کی فیڈرل کورٹ میں اماراتی حکمران خاندان کے تین افراد کے خلاف شکایت درج کروائی تھی کہ انہوں نے اسے قید کیے رکھا اور تشدد کرتے رہے۔
ابتدامیں یہ الزام ثابت نہ ہو سکا لیکن بعد ازاں امریکہ محکمہ داخلہ نے غیرملکی سفراء کی جو خط و کتابت افشاء کی اس میں یہ الزام بھی سچ ثابت ہو گیا اورابوظہبی کے شہزادہ ولی عہد شیخ محمد بن زید النہیان کو اس شخص کو 1ارب روپے ادا کرنے کا حکم دے دیا گیا۔ رپورٹ کے مطابق متحدہ عرب امارات کے امریکہ میں تعینات سفیر یوسف العتیبہ کی ای میلز منظرعام پر آنے سے یہ الزام درست ثابت ہوا۔ شہزادہ محمد بن زید نے حسن کو جرمانے کی رقم ادا کر دی ہے۔
واضح رہے کہ حسن کو 1984ء میں اغواکرکے تشدد کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ تب وہ شاہی خاندان کے ایک فرد کے ساتھ ہتھیاروں کے کاروبار میں بطور مشیر کام کر رہا تھا۔ شاہی خاندان نے کاروباری مسابقت کی وجہ سے اسے اغواء کرکے تشدد کا نشانہ بنایا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں