خانہ کعبہ کے اندر وہ مقام جہاں کھڑے ہوکر جھوٹی قسم کھانے اور گناہ کرنے والے کو فوری عذاب کا سامنا کرنا پڑتا ہے

خانہ خدا کی رحمت کو سمیٹنے کے لئے مسلمانان عالم بڑی آرزوئیں لیکریہاں آتے اور دعا ئیں کرتے ہیں ،خانہ کعبہ کا ہر گوشہ عافیت اور رحمت کا باعث ہے۔مقام حطیم ایسی جگہ ہے جہاں جو بھی دعا کی جائے قبول ہوتی اور جب کوئی یہاں کھڑے ہوکر کسی گناہ کا ارتکاب کرتا ہے ،اسکی سزا بھی اسکو فوری مل جاتی ہے۔
امام الازرقیؒ نے ابن جریج سے روایت کیا ہے۔ فرماتے ہیں کہ الحطیم، رلم، مقام زمزم اور الحجر کے درمیان ہے۔ اساف اور نائلہ ایک مرد اور عورت تھے۔ وہ کعبہ میں داخل ہوئے تو مرد نے عورت کو کعبہ کے اند ربوسہ دیا تواللہ تعالیٰ نے ان دونوں کو پتھر بنادیا۔ پھر کعبہ سے نکال کر ایک کو زم زم کی جگہ نصب کیا گیا اور دوسرے کو کعبہ کے سامنے رکھ دیا گیا تاکہ لوگ عبرت حاصل کریں اور ان جیسے افعال شنیعہ سے اجتناب کریں۔
اس جگہ کو حطیم کہا جاتا ہے کیونکہ یہاں قسمیں اٹھوانے کے لئے لوگ جمع ہوتے تھے اور اس میں دعا قبول ہوتی ہے۔ یہاں جس ظالم کے متعلق بددعا کی گئی وہ ہلاک ہوگیا اور بہت کم یہاں گناہ کی قسم اٹھائی گئی لیکن جس نے ارتکاب کیا ،فوراً اس کو سزاملی۔ یہ لوگوں کو ظلم سے روکنے والی جگہ ہے اور لوگ یہاں جھوٹی قسمیں اٹھانے سے ڈرتے تھے۔ یہ معاملہ اسی طرح چلتا رہا حتیٰ کہ اللہ تعالیٰ نے اسلام کا سراج منیر طلوع فرمایا پس اب اس معاملہ کو اللہ تعالیٰ نے قیامت تک موثر فرمادیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں