4 کروڑ روپے تاوان کی رقم کامیابی سے حاصل کرنے والے اغوا کار کو عشق لے ڈوبا، پیسے حاصل کرنے کے بعد بھاگنے کی بجائے اپنی گرل فرینڈ کے لئے ایسا کام کرنے لگ گیا کہ حوالات جا پہنچا

فریدآباد(ویب ڈیسک) کہتے ہیں کہ مجرم اپنے پیچھے کوئی سراغ ضرور چھوڑ جاتا ہے جو اسے پکڑوانے کا سبب بن جاتا ہے لیکن بھارت میں ایک شاطر مجرم کو کسی سراغ کی بجائے اس کے دل کی بے قراری نے پکڑوا دیا۔ دراصل اس بدقسمت اغواکار کو آتش عشق نے ایسا مجبور کیا کہ چار کروڑ کا تاوان ہتھیانے کے بعد اگلے ہی روز محبوبہ سے ملنے جا پہنچا، جہاں پولیس پہلے سے اس کی منتظر تھی۔
ٹائمز آف انڈیا کے مطابق 25 سالہ راہول کمار نے تین ساتھیوں کے ساتھ مل کر اپنے سابقہ باس کے بیٹے کو اغوا کیا تھا، جو حال ہی میں امریکا سے پڑھ کر واپس آیا تھا۔ راہول کو اس کے باس نے کچھ عرصہ قبل نوکری سے نکال دیا تھا جس کا بدلہ لینے کے لئے موقع ملتے ہی اس کے بیٹے کو اغواءکر لیا۔ وہ اپنے باس سے چار کروڑ کا تاوان حاصل کرنے میں تو کامیاب ہو گیا لیکن ملک چھوڑنے سے قبل فرید آباد شہر میں مقیم اپنی محبوبہ سے ملنے چلا گیا۔ دراصل وہ محبوبہ کو بھی اپنے ساتھ لیجانا چاہتا تھا لیکن اسے معلوم نہیں تھا کہ پولیس پہلے ہی لڑکی کی نگرانی کر رہی تھی۔
یہ لڑکی اس کے ساتھ دفتر میں کام کرتی تھی اور روزانہ ان کے درمیان فون پر درجنوں بار رابطہ ہوتا تھا۔ دلی سے تعلق رکھنے والے بزنس مین کا بیٹا اغواءہوتے ہی پولیس نے اس کے تمام ملازمین کی فون کالز پر نظر رکھنا شروع کر دی تھی۔ تب ہی یہ انکشاف ہوا کہ ایک لڑکی کے فون پر پہلے تو روزانہ درجنوں کالز آتی تھیں لیکن اچانک کالز کا یہ سلسلہ بند ہو گیا تھا۔ پولیس نے اس لڑکی کی نگرانی شروع کر دی اور بالآخر ان کا شک درست نکلا۔ اس کے دوست راہول نے نوجوان کو اغواءکیا تھا اور ساتھ ہی اپنا موبائل فون بند کر دیا تھا۔ مغوی کو تو چار کروڑ کا تاوان ادا کر کے رہا کروا لیا گیا لیکن پولیس اغوا کار کو پکڑنے کے لئے متحرک رہی۔
اگلے ہی دن راہول نوٹوں سے بھرا بیگ لے کر اپنی محبوبہ کے گھر جا پہنچا لیکن ڈرائنگ روم میں اس کا استقبال پولیس نے کیا۔ اسے فوری طور پر دبوچ لیا گیا جبکہ اس سے حاصل ہونے والی معلومات سے اس کے دو ساتھیوں سنیل اور گھنشیام کو بھی پکڑ لیا گیا۔ ان کا چوتھا ساتھی تاحال مفرور ہے۔ تاوان کے لئے ادا کی گئی رقم بھی برآمد کر لی گئی ہے۔ اس میں سے صرف چار لاکھ کم ہیں، جو مفرور ملزم کے پاس ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں