جب بدنامی کا ڈر دل میں بیٹھ جائے ،ایک ایسی دعا جو گناہ گاروں کی لاج رکھ لیتی ہے

انسان خطا کا پتلا ہے اور اس سے کوئی نہ کوئی گناہ سرزد ہوتا ہی رہتا ہے۔یہ اللہ ہی ہے جو انسان کو اس وقت بھی بخش دیتا ہے جب انسان گناہوں کے پہاڑتلے دب جاتا ہے اور بدنامی کا طوق اسکے گلے میں آن پڑتا ہے۔اللہ چاہے تو اسکی لاج رکھتے ہوئے اس کی پردہ پوشی فرماتا ہے ۔بندہ چاہے اور اسکے دل میں گناہوں اور بدنامی کا خوف ہوتو اسے چاہئے کہ اپنے لئے دعا کرے تاکہ اللہ اسکا بھرم قائم رکھے،وہ ستار العیوب ہے۔دعا خلوص نیت سے کی جائے اور آئیندہ گناہوں سے توبہ کی جائے تو اللہ اپنا فضل فرماتا ہے۔ایسے لوگ جن کے گھروالوں کی بدنامی ہو،کوئی ان کی عزتیں اچھالنے پر اتر آئے ،دفاتر اور کاروبار میں ناحق جنہیں بدنام کیا جائے ،ایسے لوگوں کو چاہئے کہ بھی اس دعا کو اپنا وسیلہ بنائیں اور روزانہ درود خضری کے ساتھ اول وآخر تین سو تیرہ بار یہ دعاپڑھنا معمول بنا لیں۔اللہ کریم ان کے اور انہیں بدنام کرنے والوں کے دل بدل ڈالے گا

اپنا تبصرہ بھیجیں