ڈاکٹر ماہا علی کیس کی تفتیش مکمل، واقعہ خود کشی قرار دیدیا گیا

کراچی: (سٹی نیوز) شہر قائد کے علاقے ڈیفنس میں ڈاکٹر ماہا علی کی موت کو پولیس نے اپنی تحقیقات کی بناء پر خودکشی قرار دے دیا۔

سینیئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (ایس ایس پی) ضلع جنوبی شیراز نذیر نے بتایا کہ ڈاکٹر ماہا علی کی موت سے متعلق پولیس کی تفتیش مکمل ہوگئی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ تحقیقات کے مطابق ڈاکٹر ماہا نجی اسپتال کی ڈیوٹی سے واپس آئی تو کافی ڈپریشن میں تھی، ماہا بہن کے ساتھ کمرےمیں لیٹی تھی، والد بھی آکر اسی کمرے میں بیڈ پر لیٹ گیا۔

یہ بھی پڑھیں: کراچی: خود کشی کرنیوالی خاتون ڈاکٹر ماہا کیس میں اہم پیشرفت، اسلحہ کے مالک کا پتہ لگ گیا

شیراز نذیر کے مطابق اس کے بعد ڈاکٹرماہاعلی بہانے سے باتھ روم میں گئی، دروازہ بند کرکے شاور چلادیا، باتھ روم میں دیوارکےساتھ بیٹھ کرکنپٹی پر نائن ایم ایم پستول سےگولی چلادی۔

ایس ایس پی کے مطابق گولی سر سے پار ہوکر دیوار میں پیوست ہوگئی جس کے تمام شواہد پولیس نے حاصل کرلیے ہیں۔

شیرازنذیر نے مزید بتایا کہ گولی کی آواز سن کر والد بھاگا اور بیٹی کےساتھ مل کرباتھ روم کا دروازہ توڑا تو دیکھا کہ باتھ روم میں چلتے شاور کے نیچے ماہا خون میں لت پت تھی۔

ایس ایس پی شیرازنذیر کے مطابق اس کے بعد والد نے مددگار15 کو فون کیا، قریبی عزیز ڈاکٹر زہرہ کو بھی فون کرکے بلوایا، ڈاکٹر ماہاعلی شاہ کو ہسپتال منتقل کیا گیا لیکن علاج کےدوران وہ چل بسی۔

یہ بھی پڑھیں: کراچی میں خاتون ڈاکٹر کی مبینہ خودکشی، پولیس نے تحقیقات کا دائرہ وسیع کر دیا

ایس ایس پی کے مطابق ڈاکٹر ماہاعلی شاہ شدید ڈپریشن کا شکار تھی، خود کو مارنے کی باتیں کرتی تھی، ڈاکٹرماہاعلی نےخودکشی کیوں کی؟ متعلقہ کرداروں کےخلاف تفتیش جاری ہے۔

ایس ایس پی شیزار نذیر کے مطابق ماہاعلی کوپستول فراہم کرنےکےالزام میں دو ملزمان گرفتار ہیں، نائن ایم ایم پستول سعدصدیقی کی ملکیت تھی اور یہ پستول ماہاعلی کو تابش قریشی نامی شخص نے لے کر دی تھی

اپنا تبصرہ بھیجیں