نقیب اللہ محسود قتل کیس، انکوائری کمیٹی نے نقیب سمیت 4 افراد کو بے گناہ قراردیدیا

کراچی (نیوز ڈیسک)نقیب اللہ محسود قتل کیس کی انکوائری کمیٹی نے نقیب سمیت 4 افراد کا قتل ماوائے عدالت قراردیدیا اور چاروں کو بے گناہ قرار دیدیا ،انکوائری کمیٹی نے اپنی رپورٹ انسداد دہشتگردی عدالت میں پیش کر دی،عدالت نے نقیب اللہ ودیگر کے خلاف درج 5 مقدمات ختم کرنے کی رپورٹ منظورکر لی ۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کی انسداد دہشتگردی عدالت میں نقیب اللہ محسود قتل کیس کی سماعت ہوئی،انکوائری کمیٹی نے اپنی رپورٹ انسداد دہشتگردی عدالت میں پیش کر دی۔انکوائری کمیٹی نے نقیب سمیت 4 افراد کا قتل ماورائے عدالت قرار دے دیا،عدالت نے نقیب اللہ ودیگر کے خلاف درج 5 مقدمات ختم کرنے کی رپورٹ منظورکرلی۔

انکوائری رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انکوائری کمیٹی اور تفتیشی افسرنے جائے وقوعہ کا معائنہ کیا،نقیب اللہ،صابر،نذرجان، اسحاق کودہشتگرد قرار دیکر ویران مقام پر قتل کیا گیا،رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پولٹری فارم میں نہ ہی گولیوں کے نشان ملے اور نہ ہی دستی بم پھٹنے کے آثار ملے،حالات واقعات اور شواہد کی روشنی میں یہ مقابلہ خود ساختہ جھوٹا اور بے بنیاد تھا۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ نقیب اللہ اورچاروں افراد کو کمرے میں قتل کرنے کے بعد اسلحہ اور گولیاں ڈالی گئیں، راؤ انوار اور اس کے ساتھی جائے وقوعہ پر موجود تھے۔

واضح رہے کہ سابق ایس ایس پی ملیر رائو انوار نے گزشتہ سال جعلی پولیس مقابلے میں نقیب اللہ محسود سمیت 4افراد کو قتل کر دیا تھا،واقعہ کے سوشل میڈیا پر آنے کے بعد سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کے ازخودنوٹس لینے پر سابق ایس ایس پی ملیر رائو انوار روپوش ہو گئے تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں