سڈنی:سابق آسٹریلین امپائر ڈیرل ہیئر نے شراب خانے میں کام کے دوران کرپشن اور رقم چرانے کا جرم تسلیم کر لیا

سڈنی(نیٹ نیوز) سابق آسٹریلین امپائر ڈیرل ہیئر نے شراب خانے میں کام کے دوران کرپشن اور رقم چرانے کا جرم تسلیم کر لیا ہے جس پرآسٹریلین عدالت نے ان سے 18 ماہ تک اچھا رویہ برقرار رکھنے کا بانڈ بھروایا ہے۔ 65 سالہ ڈیرل ہیئر نے تقریباً نو ہزار ڈالر کی رقم واپس ادا کر کے سزا سے بچنے میں کامیاب رہے اور ساتھ ساتھ انہوں نے اپنے مالک کو ایک تحریری معافی نامہ بھی جمع کرایا ہے۔اورنج لوکل کورٹ میں اپنے تحریری بیان میں آسٹریلین امپائر نے کہا کہ وہ اپنے جوئے کی لت کی وجہ سے مشکلات سے دوچار تھے اور اسی وجہ سے ان سے یہ غلطی سرزد ہوئی۔یاد رہے کہ ڈیرل ہیئر کو 1992 سے 2008 تک 78 ٹیسٹ میچوں میں امپائرنگ کا اعزاز حاصل ہے۔متنازع آسٹریلین امپائر پاکستان کے ساتھ بھی متعصبانہ رویہ رکھنے کیلئے شہرت رکھتے ہیں اور اس کی سب سے بڑی مثال 2006 کا اوول ٹیسٹ ہے جب انہوں نے پاکستان پر بال ٹیمپرنگ کا الزام عائد کیا تھا جس پر پاکستان ٹیم نے میچ کھیلنے سے انکار کردیا تھا اور امپائرز نے میچ انگلش ٹیم کو ایوارڈ کردیا تھا۔اس تنازع کے بعد ڈیرل ہیئر کو آئی سی سی کے ایلیٹ ٹیسٹ پینل سے نکال دیا گیا تھا تاہم دو سال بعد وہ دوبارہ جگہ پانے میں کامیاب رہے تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں