پیسے نہیں، عمر اکمل جرمانے کی یکمشت ادائیگی سے قاصر

لاہور: (سٹی نیوز) کرکٹر عمر اکمل مبینہ طور پر سپاٹ فکسنگ کیس میں کھیلوں کی عالمی ثالثی عدالت کے عائد کردہ جرمانے کی ادائیگی سے قاصر ہیں۔
جرمانے کی عدم ادائیگی کے باعث 30 سالہ بلے باز کا ری ہیبلی ٹیشن پروگرام زیر التوا ہے۔ پچھلے مہینے کے آغاز میں کھیلوں کی عالمی ثالثی عدالت نے عمر اکمل کی پابندی کو 18 ماہ سے کم کر کے 12 ماہ کر دیا تھا لیکن بدعنوانی سکینڈل میں ملوث ہونے پر 42 لاکھ 50 ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کیا تھا۔
پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے بدعنوان عناصر کی جانب سے کی گئی آفرز کی اطلاع نہ دینے پربیٹسمین کو فروری 2020 میں پی ایس ایل 5 کے آغاز سے قبل معطل کر دیا تھا۔ عمر اکمل 20 فروری کو پہلے ہی ایک سال کی سزا بھگت چکے ہیں لیکن وہ بھاری مالی جرمانے کی وجہ سے پی سی بی کے سکیورٹی اور اینٹی کرپشن ڈیپارٹمنٹ کا ری ہیبلی ٹیشن پروگرام شروع کرنے سے قاصر ہیں۔
قومی ٹیم کے جارح مزاج بلے باز نے پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) سے درخواست کی ہے کہ وہ انہیں اقساط میں رقم ادا کرنے کی اجازت دے۔ ذرائع نے بتایا کہ عمر اکمل کی درخواستوں کے جواب میں پی سی بی نے عمر اکمل سے ثبوت مانگ لیا ہے کہ واقعی وہ جرمانہ ادا نہیں کرسکتے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں