پاکستان کو گرے لسٹ میں ڈالنے کا معاملہ، امریکہ نے سعودی عرب کو کیا پیشکش کی تو اس نے پاکستان کا ساتھ چھوڑ دیا؟ حقیقت سامنے آگئی

واشنگٹن (ویب ڈیسک) پاکستان کی نگران حکومت کی کوششوں کے باوجوددہشت گردی کے لیے مالی وسائل کی ترسیل پر نظر رکھنے والی عالمی تنظیم فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) نے پاکستان کو گرے لسٹ میں شامل کردیا ہے لیکن اب سعودی عرب کے پاکستان کا ساتھ نہ دینے کی حقیقت سامنے آگئی۔
انگریزی جریدے ڈان کے مطابق فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا پاکستان سے متعلق پہلا اجلاس رواں سال فروری میں ہواتھا جس میں ترکی ، چین اور سعودی عرب نے پاکستان کو واچ لسٹ میں شامل کرنے کی امریکی قرارداد کی مخالفت کی تھی لیکن 22فروری کو ہونیوالے دوسرے اجلاس میں پاکستان کو امریکہ نے واچ لسٹ میں شامل کروالیا۔
رپورٹ کے مطابق اس وقت دراصل امریکہ نے سعودی عرب کو اعتماد میں لے لیاتھا کہ ایف اے ٹی ایف کی مکمل رکنیت کے بدلے وہ پاکستان مخالفت میں اس کا ساتھ دے ۔ اس کے بعدپاکستان کی حمایت میں صرف دو ممالک ترکی اور چین باقی رہ گئے تھے جبکہ پاکستان کو اپنی حمایت میں تین رکن ممالک کی حمایت چاہیے تھی۔ اس مرحلے میں چینی حکام نے پاکستان کو آگاہ کردیاتھا کہ وہ حمایت نہیں کررہے کیونکہ وہ نہیں چاہتے کہ ایک ایسی چیز کی حمایت کریں جو ناکام ہونے جارہی ہے۔ پاکستان نے چین کے اس فیصلے کو سراہا اور ترکی کو بھی آگاہ کیا کہ تمام مشکلات کے باوجودانہوں نے پاکستان کی حمایت جاری رکھی ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں