ٹافیاں دلانے کے بہانے 6 سالہ بچی سے بدفعلی، لڑکی کے باپ کے آنے پر مضروبہ کیساتھ کیا سلوک کیاگیا؟ انتہائی دردناک تفصیلات منظرعام پر

کہروڑ پکا (ویب ڈیسک) ظالم جنسی درندے کی ٹافیوں کا بہانہ کرکے چچا کے گھر جاتی ہوئی 6 سالہ معصوم بچی کو منہ پر کپڑا باندھ کر دکان بند کرکے درندگی، باپ نے دکان کا دروازہ کھٹکھٹایا تو معصوم بچی کا سانس بند کردیا، باپ کے جاتے ہی بچی کو نیم مردہ حالت میں خون میں لت پت گھر کے آگے پھینک کر فرار ہوگیا، باپ نے ہسپتال لیجاکر بچی کی جان تو بچالی تاہم مقدمہ درج کرکے تھانیدار نے وحشی درندے سے 2 لاکھ لے کر چھوڑ دیا جبکہ معصوم بچی کے والد کو تھانے سے دھکے دے کر بھگادیا۔

کہروڑ پکا محلہ ظفر آباد کے غریب رکشہ ڈرائیور کی 6 سالہ معصوم بچی اپنے چچا کے گھر جارہی تھی کہ وحشی درندہ رفیق تیلی نے بچی کو ٹافیاں دینے کا کہہ کر منہ پر کپڑا باندھ کر اپنی دکان میں لے گیا اور بچی کے ساتھ درندگی شروع کردی۔ بچی کا باپ جب تلاش کرنے کیلئے چچا کے گھر گیا تو وہاں بچی موجود نہ تھی، باپ پریشان ہوکر گھر لوٹ رہا تھا کہ اس کو اس کو درندہ صفت رفیق تیلی کی دکان کا دروازہ بند دیکھ کر شک ہوا، اس نے رفیق تیلی کی دکان کا دروازہ کھٹکھٹایا تو رفیق نے 6 سالہ بچی کا سانس بند کرکے اس کے باپ کو جواب دیا کہ بچی یہاں نہیں آئی۔ باپ واپس گھر آیا توکچھ دیر بعد درندہ رفیق تیلی نے موقع پاکر مبینہ طور پر بچی کی نیم مردہ حالت میں خون میں لت پت اس کے گھر کے آگے کوڑے پر ڈال کر فرار ہوگیا۔ بچی کا باپ گھر سے باہر آیا تو بیٹی کو خون میں لت پت دیکھ کر دھاڑیں مار مار کر رونے لگا۔
اسی اثناءمیں محلہ دار آگئے او ربچی کو ہسپتال لے گئے۔ بچی معجزانہ طور پر بچ گئی ، ڈاکٹرز نے میڈیکل سرٹیفکیٹ میں زیادتی ثابت کردی۔ تھانہ سٹی پولیس نے مقدمہ درج کرنے کیلئے ورثاءسے مبینہ طور پر پیسے مانگے، ورثناءنے پولیس کو پیسے دئیے، مقدمہ درج ہوگیا لیکن تھانہ سٹی میں کافی عرصے سے تعینات سب انسپکٹر مقبول حسین کو تفتیش دے کر تفتیشی افسر مقرر کردیا گیا۔ سب انسپکٹر مقبول حسین ضلع لودھراں کا سب سے کرپٹ سب انسپکٹر ہے سو مبینہ طور پر وہ خود درندہ صفت رفیق سے رابطہ کرکے اس سے بھاری رقم رشوت کی ڈیمانڈ کی او رکہ مجھے دو لاکھ روپے دو میں مقدمہ کو ختم اور فارغ کردوں گا۔

بچی کے والد نے بتایا کہ سب انسپکٹر مقبول حسین ہمیں دھکے دے کر نکال دیتا ہے، کہتا ہے کہ تم جھوٹ بولتے ہو ۔ بچی کے باپ نے بتایا کہ رفیق تیلی درندہ تھانے آجارہا ہے ، اسے پروٹوکول دیا جارہا ہے جبکہ درندہ رفیق ہمیں الٹا دھمکیاں دے رہا ہے کہ مقدمہ ختم کرواورنہ میں تم کو جان سے مار دوں گا۔ بچی کے باپ نے کہا کہ آر پی او ملتان ،آئی جی پنجاب اور وزیراعلیٰ مجھے انصاف فراہم کریں ورنہ میں گھر والوں سمیت وزیراعلیٰ آفس کے سامنے خود کو آگ لگاکر خود کشی کرلوں گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں